New Mp3 mp4 Songs Free Download H4A
Allah Is The Creature Of All Over The World Allah Is One


Allah Is The Creature Of All Over The World Allah Is One 



قوم عاد

ﻗﻮﻡ ﻋﺎﺩ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﯽ ﻗﻮﻡ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﺑﮍﮮک ﻃﺎﻗﺘﻮﺭ ﺗﮭﮯ، 40 ﮨﺎﺗﮫ ﺟﺘﻨﺎ ﻗﺪ، 800 ﺳﮯ 900 ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ، ﻧﮧ ﺑﻮﮌﮬﮯ ہوﺗﮯ ، ﻧﮧ ﺑﯿﻤﺎﺭ ہوﺗﮯ، ﻧﮧ ﺩﺍﻧﺖ ﭨﻮﭨﺘﮯ، ﻧﮧ ﻧﻈﺮ ﮐﻤﺰﻭﺭ ہوﺗﯽ، ﺟﻮﺍﻥ ﺗﻨﺪﺭﺳﺖ ﻭ ﺗﻮﺍﻧﺎ ﺭﮨﺘﮯ ۔۔۔

ﺑﺲ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﻣﻮﺕ ﺁﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ہوﺗﺎ ﺗﮭﺎ ۔۔۔
ﺍﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ہُود ﻋﻠﯿﮧ ﺍﻟﺴﻼﻡ ﮐﻮ ﺑﮭﯿﺠﺎ ، ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﺩﯼ ، ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﭘﮑﮍ ﺳﮯ ﮈﺭﺍﯾﺎ ۔۔۔

ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺑﻮﻟﮯ؛
ﺍﮮ ہُود ! ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺧﺪﺍؤﮞ ﻧﮯ ﺗﯿﺮﯼ ﻋﻘﻞ ﺧﺮﺍﺏ ﮐﺮ ﺩﯼ ہے ۔ ﺟﺎ ﺟﺎ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻔﻞ ﭘﮍﮪ ، ﮨﻤﯿﮟ ﻧﮧ ﮈﺭﺍ، ﮨﻤﯿﮟ ﻧﮧ ﭨﻮﮎ ۔۔۔ ﺗﯿﺮﮮ ﮐﮩﻨﮯ ﭘﺮ ﮐﯿﺎ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺎﭖ ﺩﺍﺩﺍ ﮐﺎ ﭼﺎﻝ ﭼﻠﻦ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﮟ ﮔﮯ؟
ﻋﻘﻞ ﺧﺮﺍﺏ ہو ﮔﺌﯽ ﺗﯿﺮی ، اگر تیرے ﮐﮩﻨﮯ ﭘﺮ ﭼﻠﯿﮟ ﺗﻮ ﮨﻢ ﺗﻮ ﺑﮭﻮﮐﮯ ﻣﺮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ۔۔۔
ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺷﺮﮎ ﻇﻠﻢ ﺍﻭﺭ گناہوﮞ ﮐﮯ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﺳﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﻟﻠﮑﺎﺭﺍ ، ﺗﮑﺒﺮ ﺍﻭﺭ ﻏﺮﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﺪ ﻣﺴﺖ ﺑﻮﻟﮯ؛
فَاَمَّا عَادٌ  فَاسۡتَکۡبَرُوۡا فِی الۡاَرۡضِ بِغَیۡرِ الۡحَقِّ وَ قَالُوۡا مَنۡ  اَشَدُّ مِنَّا قُوَّۃً ؕ اَوَ لَمۡ  یَرَوۡا  اَنَّ اللّٰہَ  الَّذِیۡ خَلَقَہُمۡ ہُوَ اَشَدُّ مِنۡہُمۡ  قُوَّۃً ؕ وَ کَانُوۡا بِاٰیٰتِنَا یَجۡحَدُوۡنَ ﴿۱۵﴾
پھر عاد کا قصہ تو یہ ہوا کہ انہوں نے زمین میں ناحق تکبر کا رویہ اختیار کیا ، اور کہا کہ : کون ہے جو طاقت میں ہم سے زیادہ ہو ۔ بھلا کیا ان کو یہ نہیں سوجھا کہ جس اللہ نے ان کو پیدا کیا ہے وہ طاقت میں ان سے کہیں زیادہ ہے اور وہ ہماری آیتوں کا انکار کرتے رہے ۔"
( سورة حٰمٓ السَّجْدَة : ١۵)

ﮐﻮﺋﯽ ہے ﮨﻢ ﺳﮯ زیادہ ﻃﺎﻗﺘﻮﺭ ﺗﻮ ﻻؤ ﻧﺎﮞ؟
ﮨﻤﯿﮟ ﮐﺲ ﺳﮯ ﮈﺭﺍﺗﮯ ہو؟
ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻗﺤﻂ ﺑﮭﯿﺠﺎ، ﺑﮭﻮﮎ ﻟﮕﯽ، ﺳﺎﺭﺍ ﻏﻠﮧ ﮐﮭﺎ ﮔﺌﮯ، ﻣﺎﻝ ﻣﻮﯾﺸﯽ ﮐﮭﺎ ﮔﺌﮯ، ﺣﺮﺍﻡ ﭘﺮ آ ﮔﺌﮯ، ﭼﻮہے، ﺑﻠﯽ، ﮐﺘﮯ ﮐﮭﺎ ﮔﺌﮯ، ﺳﺎﻧﭗ ﮐﮭﺎ ﮔﺌﮯ، ﺩﺭﺧﺖ ﮔﺮﺍ ﮐﺮ ﺍس کے ﭘﺘﮯ ﮐﮭﺎ ﮔﺌﮯ ۔۔۔
ﺑﮭﻮﮎ ﻧﮧ ﻣﭩﯽ، ﻧﮧ ﺑﺎﺭﺵ ہوﺋﯽ، ﻧﮧ ﻗﻄﺮﮦ ﮔﺮﺍ، ﻧﮧ ﻏﻠﮧ ﺍﮔﺎ ۔۔۔
ﭘﮭﺮ ﺗﻨﮓ ﺁ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﯾﮏ ﻭﻓﺪ ﺑﯿﺖ ﺍﻟﻠﮧ ﺑﮭﯿﺠﺎ،
ﺍﻥ ﮐﺎ ﺩﺳﺘﻮﺭ ﺗﮭﺎ ﺟﺐ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﺁﺗﯽ ﺗﻮ ﺍﻭﭘﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻮ ﭘﮑﺎﺭ ﺍﭨﮭﺘﮯ، ﺟﺐ ﺩﻭﺭ ہو ﺟﺎﺗﯽ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﻮﺟﻨﮯ ﻟﮕﺘﮯ ۔۔۔
ﺑﯿﺖ ﺍﻟﻠﮧ ﻭﻓﺪ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻟﺌﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﻭ ﮐﮧ ﺑﺎﺭﺵ ﺑﺮﺳﺎﺋﮯ ۔
ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ تین ﺑﺎﺩﻝ بھیجے۔ ﮐﺎﻻ ، ﺳﻔﯿﺪ اور ﺳﺮﺥ ۔
ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﮐﺮﻭ، ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﻮﺭﮦ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺳﺮﺥ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ہوﺍ ہوﺗﯽ ہے، ﺳﻔﯿﺪ ﺧﺎﻟﯽ ہوﺗﺎ ہے، ﮐﺎﻟﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﯽ ہوﺗﺎ ہے۔ ﮐﺎﻻ ﻣﺎﻧﮕﻮ ۔۔۔
ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﻧﮯ فرمایا ﻭﺍﭘﺲ ﭘﮩﻨﭽﻮ، ﺑﺎﺩﻝ ﺑﮭﯿﺠﺘﺎ ہوﮞ ۔
ﻭﮦ ﺧﻮﺷﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﺋﮯ ، ﺳﺐ ﻟﻮﮒ ﺍﯾﮏ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺟﻤﻊ ہوﺋﮯ ، ﺑﺎﺩﻝ ﺁﯾﺎ ، ﻭﮦ ﻧﺎﭼﻨﮯ ﻟﮕﮯ ﮐﮧ ﺍﺏ ﺑﺎﺭﺵ ہو ﮔﯽ، ﻗﺤﻂ ﻣﭩﮯ ﮔﺎ، ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﻣﻠﮯ ﮔﺎ۔۔۔
ﮐﯿﺎ ﭘﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﺎﺭﺵ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﻋﺬﺍﺏ ہے ﺟﻮ ﺗﻢ ہُود ﺳﮯ ﮐﮩﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﻟﮯ ﺁ ! ﺟﺲ ﺳﮯ ﮨﻢ ﮐﻮ ﮈﺭﺍﺗﺎ ہے۔
ﺍﺱ ﺑﺎﺩﻝ ﻣﯿں ﺍﯾﺴﯽ ﺗﻨﺪ ﻭ ﺗﯿﺰ ہوﺍ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﭨﮭﺎ ﻣﺎﺭﺍ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺍﮌﺍ ﺩیئے، 60 ﮨﺎﺗﮫ ﮐﮯ ﻗﺪ ﺍﻭﺭ ﻟﻮﮒ ﺗﻨﮑﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﮌ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ہوﺍ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﭨﮑﺮﺍﺗﯽ ﺗﮭﯽ، ﺍﺗﻨﯽ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍﺗﯽ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﮭﯿﺠﮯ ﻧﮑﻞ ﻧﮑﻞ ﮐﺮ ﻣﻨﮧ ﭘﺮ ﻟﭩﮏ ﮔﺌﮯ۔ ﺑﻌﺾ ﻟﻮﮒ ﺑﮭﺎﮒ ﮐﺮ ﻏﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺲ ﮔﺌﮯ ﮐﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﻮ ہوﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﺁ ﺳﮑﺘﯽ ۔ ﻣﮕﺮ ﻣﯿﺮﮮ ﺭﺏ ﮐﺎ ﺣﮑﻢ ہو ﮐﺮ ﺭﮨﺘﺎ ہے۔ ہوﺍ ﻏﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺑﮕﻮﻟﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺩﺍﺧﻞ ہوﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮑﻮ ﺑﺎﮨﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺩﯾﺘﯽ ۔۔۔
ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ
ﻓﮭﻞ ﺗﺮﯼ ﻣﻦ ﺑﺎﻗﯿﮧ
ﮐﯿﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﻗﯽ ﺑﭽﺎ ہے ؟
ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮨﻼﮎ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺩﮐﮭﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺟﺐ ﺗﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﯽ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﮐﺮﻭ ﮔﮯ ، ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻢ ﭘﺮ ﺍﯾﺴﯽ ﺟﮕﮧ ﺳﮯ ﻋﺬﺍﺏ ﺑﮭﯿﺠﮯ ﮔﺎ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﮔﻤﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﻧﮧ ہو ﮔﺎ ۔۔۔

سوچنے کی بات یہ ہے کہ
ﺟﻮ ﮔﻨﺎﮦ ﻗﻮﻡ ﻋﺎﺩ ﻧﮯ ﮐﯿﺎ ،
ﮐﯿﺎ ﻭﮦ ﮨﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ؟
ﮐﯿﺎ ﮨﻢ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﯽ ﺣﺪﻭﮞ ﮐﺎ ﭘﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﮔﺌﮯ؟
ﮐﯿﺎ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﻠﮑﺎﺭﺍ ہوا ہے؟
ﺗﻮﺑﮧ ﮐﺮﻭ ، ﺍﻟﻠﮧ ﺳﮯ ﮈﺭﻭ ، ﻗﺮﺁﻥ ﭘﮍﮬﻮ ۔۔۔ ﺟﻦ ﮔﻨﺎہوﮞ ﮐﻮ ﮨﻢ ﻣﻌﻤﻮﻟﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﻧﮯ ﺍﻥ ﮔﻨﺎہوﮞ ﭘﺮ ﭘﻮﺭﯼ ﭘﻮﺭﯼ ﻗﻮﻣﯿﮟ ﺯﻣﯿﻦ ﺑﻮﺱ ﮐﺮ ﺩﯼ ﮨﯿﮟ ۔
ﺍﺴﺘﻐﻔﺮﺍﻟﻠﮧ ﺭﺑﯽ ﻣﻦ ﮐﻞ ﺫﻧﺐ واتوبو الیہ

0 Comments